غزل ہاے نظام نو    

زندوں کو  زندہ گاڑ  کے  کہتا ھے خوش رھو

 مُردے  گڑے  اُکھاڑ کے   کہتا  ھے خوش رھو

کہتا  ھے  بستیوں کو  بسانا ھے اُس کا کام

ساری زمیں  اُجاڑ  کے کہتا  ھے  خوش رھو

 کرتا ھے یوں  تو بیٹھ کے سب سے مزاکرات

 ھر اک سے پھر بگاڑ کے کہتا ھے خوش رھو

 آئین    لکھتا   رہتا    ھے  امن  و   امان   کا

 قرطاس  امن پھاڑ  کے کہتا  ھے خوش رھو

 نسلوں  کو   دے  رہا ھے سبق  سبزہ زار کا

 پھل پھول سارےجھاڑ کے کہتا ھےخوش رھو

 کہتا ھے اُس  کے  قد کے   برابر  کوئی نہیں

 آ ئینے  توڑ   تاڑ   کے  کہتا   ھے  خوش رھو

 کہتا  ھے  اب  فضا   پہ   فقط اُس کا راج ھے

 اور پنکھ سب کے جھاڑ کےکہتا ھےخوش رھو

 کہتاھے دھیمے لہجے میں ھے دوستی کا راز

 اور  اس کے بعد دھاڑ کے کہتا ھے خوش رھو

 مٹی    ھے  اپنی ذات میں مٹ  جائے  گا رضا

 لہجے   میں جو  پہاڑ کے، کہتاھے خوش رھو

2007   Canada

Views

Web Pages of Friends 

 

pakistan website design

 

Sign My Guestbook Get your own FREE Guestbook from htmlGEAR  View My Guestbook

All copy rights reserved. Designed and Maintained by Rafi Raza.

2007 Canada